دنیا بھر کے ڈپلومیٹک مشنز میں آن لائن سہولیات سے اوورسیز پاکستانی مستفید ہوئے” قونصلر جنرل عائشہ علی

0
242

دنیا بھر سے اوورسیز اب پاکستان میں موجود اپنی پراپرٹیز کے تمام ریکارڈز کے علاوہ نائیکوپ اور جانشینی کے سرٹیفکیٹ کا حصول باآسانی آن لائن حاصل کر سکتے ہیںقبل ازیں جانشینی سرٹیفکیٹ کیلئے اہل وطن کو پاکستان جانا پڑتا تھا اب کاغذات آپ کو بیرون ممالک پاکستان کے ڈپلومیٹک مشنز سے باآسانی مل سکتے ہیںپور ی دنیا میں بسنے والے دس ملین اوورسیز پاکستانیوں میں سے 75ہزار پاکستانی ہر سال پاور آف اٹارنی کیلئے آن لائن درخواست دے سکیں گے‘قونصلر جنرل کی بریفنگ

مین ہیٹن‘ نیویارک (منظور حسین سے)

کیپٹل آف دی ورلڈ مین ہیٹن میں واقع پاکستانی قونصلیٹ کی ہیڈ قونصل جنرل محترمہ عائشہ علی نے کہا ہے کہ حکومت پاکستان نےاوورسیزپاکستانیوں کی زندگیوں میں تبدیلی لانے کیلئے انقلابی طرز پر آن لائن سسٹم کا آغاز کردیا ہوا ہے جس کے تحت دنیا بھر میں بسنے والے پاکستانی اب ای ویزا  پاور آف اٹارنی پنجاب لینڈ ریکارڈ اتھارٹی سے منسلک پاکستان میں موجود اپنی پراپرٹیز کے تمام ریکارڈز کےعلاوہ نائیکوپ اور جانشینی سرٹیفیکیٹ کا حصول باآسانی آن لائن حاصل کر سکتے ہیں۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے دنیا بھر میں بسنےوالے پاکستانیوں خصوصاً نیویارک قونصلیٹ کی جانب سے ٹرائی اسٹیٹ نیویارک اور امریکہ کی گیارہ عدد دیگر شمال مشرقی ریاستوں میں بسنے والے پاکستانیوں کو حکومت پاکستان کی جانب سے ڈپلومیٹک مشن میں ڈیجیٹلائزیشن کے ذریعے فراہم ہونے والی تیز رفتارسہولیات کے حوالے سے مقامی میڈیا کو ایک بریفنگ کے دوران کیا۔عائشہ علی کا کہنا تھا کہ اب نیویارک سمیت دنیا بھر کے ڈپلومیٹک مشنز میں مینول ویزا کا اجراء ختم کر دیا گیا ہے انہوں نے کہا کہ دنیا بھر میں بسنے والے پاکستانیوں کے اصرار پر پاور آف اٹارنی کے حصول کو بھی ڈیجیٹلائز کرتے ہوئے آن لائن کر دیا گیا ہے اب آپ کو پاور آف اٹارنی کیلئے قونصلیٹ آنے کی ضرورت نہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ایک اندازے کے مطابق پور ی دنیا میں بسنے والے دس ملین اوورسیز پاکستانیوں میں سے 75ہزار پاکستانی ہر سال پاورآف اٹارنی کیلئے آن لائن درخواست دے سکیں گے۔ قونصل جنرل عائشہ علی کا کہنا ہے کہ اس سے قبل جانشینی سرٹیفکیٹ کیلئے اہل وطن کو پاکستان جانا پڑتا تھا مگر اب یہ اہم ترین کاغذات آپ کو بیرون ممالک پاکستان کے ڈپلومیٹک مشنز سے باآسانی مل سکتے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ اوورسیز پاکستانی پنجاب لیڈریکارڈزاتھارٹی کے ریکارڈ میں موجود پاکستان میں اپنی پراپرٹی کا ریکارڈ ہمارے سفارتخانوں اور قونصلیٹ میں آکر خود حاصل کر سکتے ہیں اس کیلئے ہمارے پاس ٹرینڈ عملہ موجود ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ اہم ترین کام پٹواری سسٹم میں موجود ہزاروں شکایات کی وجہ سے عمل میں لایا گیا۔عائشہ علی کا کہنا تھا کہ اسی ڈیجیٹلائزیشن کے نتیجے میں دنیا بھر میں بسنے والے پاکستانی پرائم منسٹر پورٹل پر جا کر کسی بھی سرکاری افسر یا محکمے کے خلاف شکایات درج کرا سکتے ہیں اور اگر ذمہ دار افسر نے وقت پر جواب نہ دیا تو یہ شکایت ہی اس کیلئے مسائل کا سامنا بن سکتی ہے جبکہ ان دنوں فارن منسٹر پورٹل کا آغازبھی کر دیا گیا ہے جبکہ دنیا بھر کے پاکستانی ڈپلومیٹک مشنز میں اب پاسپورٹ آن لائن بھی تجدید کیا جاسکتا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ اب آپ دنیا بھر میں موجود پاکستانی ڈپلومیٹک مشنز میں نائیکوپ کیلئے موجود نادرا ڈیسک سے اپنے مسائل کا حل تلاش کرسکتے ہیں۔ محترمہ عائشہ علی کا کہنا تھا کہ کووڈ19 کی وباء کے دوران جہاں دنیا میں مسائل پیداہوتے رہے انہوں نے نیویارک قونصلیٹ میں جاری ڈیجیٹلائزیشن کی سہولیات کو کمیونٹی کیلئے تیز تر کیا بلکہ اسے ہم نے اگلے مرحلے میں لے جا کراسے ٹرانسفورم بھی کیا جس سے ہم نے سالوں کا سفر مہینوں میں طے کر لیا۔مقامی میڈیا کو دی جانےوالی اہم ترین پریس کانفرنس کے دوران نیویارک قونصلیٹ کے نوجوان ڈپٹی قونصل جنرل مسٹر نواب عادل خان نےنہ صرف صحافیوں کے سوالوں کا مفصل جواب دیا بلکہ اوورسیز پاکستانیوں کو آن لائن طریقوں سے ڈپلومیٹک مشنزکی جانب سے تمام تر فراہم کرنے والی سہولیات کے حوالے سےمکمل ترین بریفنگ بھی دی۔


        

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here