جمہوری‘موثراور جوابدہ سلامتی کونسل عالمی چیلنجوں سے نمٹنے کیلئے ناگزیر ہے، منیر اکرم

0
91

مذاکراتی عمل کو مصنوعی طور پر تیز کرنے کیلئے کوئی بھی تیز رفتار اقدام، جیسے مذاکراتی متن جمع کرانا، پورے مذاکراتی عمل کو پٹڑی سے اتار سکتا ہے
پاکستان،سلامتی کونسل کی جامع اصلاحات پر جنرل اسمبلی کے دوبارہ شروع ہونیوالے غور و خوض کا خیرمقدم کرتا ہے‘پاکستانی مستقل مندوب

نیویارک(نیوز ڈیسک) اقوام متحدہ میں پاکستان کے مستقل مندوب منیر اکرم کا کہنا ہے کہ جمہوری، شفاف، موثر اور جوابدہ سلامتی کونسل، آج دنیا کو درپیش متعدد چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے ناگزیر ہے۔ یہ بات انہوں نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی اصلاحات پر جنرل اسمبلی کے اجلاس سے خطاب کے دوران کیا۔ جنرل اسمبلی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے منیر اکرم کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان،سلامتی کونسل کی جامع اصلاحات پر جنرل اسمبلی کے دوبارہ شروع ہونے والے غور و خوض کا خیرمقدم کرتا ہے۔پاکستان یونائیٹینگ فار کنسنسس (UfC) گروپ کی جانب سے اٹلی کے معزز نمائندے کے بیان سے خود کو ہم آہنگ کرتا ہے۔انہوں نے کہا کہ ہم اپنی توقع کا اعادہ کرتے ہیں کہ شریک سربراہان اپنے قومی عہدوں سے قطع نظر، اس اصلاحاتی عمل کے انتظام میں مکمل غیر جانبداری کا مظاہرہ کریں گے۔ کونسل کی کوئی بھی اصلاح جنرل اسمبلی کی پوری رکنیت کے“وسیع ممکنہ معاہدے”پر مبنی ہونی چاہیے۔منیر اکرم کا کہنا تھا کہ یہ یاد رکھنا ضروری ہے کہ بات چیت میں مختلف قسم کے زمرے شامل تھے، غیر مستقل نشستیں،طویل مدتی غیر مستقل نشستیں،دوبارہ قابل انتخاب غیر مستقل رکنیت، علاقوں یا انفرادی ریاستوں کی نمائندگی کرنے والی مستقل نشستیں،ویٹو کے ساتھ مستقل رکنیت، کوئی ویٹو یا“موخر”ویٹو۔انہوں نے مزید کہا کہ مستقبل کی سلامتی کونسل کی رکنیت کے مستقل اور غیر مستقل زمروں کے درمیان کوئی واضح تقسیم نہیں ہے۔منیر اکرم نے جنرل اسمبلی سے مخاطب ہوتے ہوئے کہا کہ مذاکراتی عمل صرف اس صورت میں کسی متن پر غور کرنے کی پوزیشن میں ہو گا جب اس طرح کے کلیدی اختلافات میں مفاہمت ہو جائے اور سلامتی کونسل کی جامع اصلاحات کے اہم عناصر، 5 کلسٹرز، پر وسیع تر ہم آہنگی ہو۔مذاکراتی عمل کو مصنوعی طور پر تیز کرنے کے لیے کوئی بھی تیز رفتار اقدام، جیسے کہ مذاکراتی متن جمع کرانا، پورے مذاکراتی عمل کو پٹڑی سے اتار سکتا ہے۔ ہم یہ ماضی کے تجربات سے جانتے ہیں۔دوسری جانب اقوام متحدہ کے علاوہ دوسری سب سے بڑی تنظیم او آئی سی کے 57 ممبران نے سربراہی اجلاس کی سطح پر اعلان کیا ہے کہ سلامتی کونسل کی توسیع شدہ رکنیت کے کسی بھی زمرے میں انہیں مساوی طور پر نمائندگی دی جائے گی۔ ہمیں ان تمام گروہوں کے تحفظات اور مفادات کے لیے حساس ہونا چاہیے۔ ہم سمجھتے ہیں کہ علاقائی نمائندگی کے حوالے سے UFC کی تجویز کو ان تاریخی ناانصافیوں کے ازالے کے لیے ترتیب دیا جا سکتا ہے، شاید ایک مخصوص گروپ کے مستقل ممبران کی تعداد کو کم کر کے اس گروپ میں دوسرے مستقل ممبر کو شامل کرنے کے بجائے جو کہ سلامتی کونسل میں تین مستقل ممبران سے لطف اندوز ہوں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here