واشنگٹن:ایم کیو ایم امریکہ کاسالانہ کنوینشن انتہائی جوش و جذبے سے منایا گیا۔

0
377

کنوینشن کا آغاز سینڑل آرگنائزر ایم کیوایم امریکہ مطلوب زیدی نے اراکین سینڑل آرگنائزنگ کمیٹی کے ہمراہ کارکُنان کے اجتماع میں باضابطہ طور پر 18 جون 2021 کو کیا

کنوینشن کے دوسرے روز کارکُنان و عوام کی بڑی تعداد نے ڈوپنٹ سرکل سے وائٹ ہاؤس تک ریلی نکالی ریلی کے شُرکاء نے بعداز ریلی امریکہ کے اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کے سامنے پُر امن مظاہرہ بھی کیا

دوسرے دن کے دوسرے سیشن میں کارکنان و زمہ داران نے شام میں ایک بیٹھک کا اہتمام کیا جس میں فکری و ذہنی صلاحیتوں کی نشوو نما ومستقبل کے لایحہ عمل پر سیر حاصل گفتگو کی گئی

کنوینشن کے تیسرے اور آخری روز ایک عظیم الشان عوامی پروگرام کا اہتمام کیا گیا جس سے بابائے مہاجر قوم قائد تحریک محترم الطاف حسین نے خطاب کیا۔ اس موقع پر ناظرین کا جوش و خروش قابل دید تھا اور لوگ اپنے قائد کودیکھ اور سن کر انتہائی جذباتی ہوگئے۔ یہ خطاب سوشل میڈیا کے لنکس کے زریعے دنیا بھر میں براہ راست نشر کیا گیا۔ اس عوامی پروگرام سے دیگر ذمہ داران و مہمانان گرامی نے بھی کلام کیا واشنگٹن میں ہونے والے ایم کیو ایم امریکہ کے اس روزہ سالانہ کنوینشن کو انتہاء جوش و جذبے سے منایا گیا۔ اس سلسلے میں 17 جون 2021 ہی سے امریکا کی دیگر ریاستوں سے کارکنان کی آمد کا سلسلہ شروع ہوچُکا تھا۔ تین روزہ سالانہ کنوینشن کا باقاعدہ آغاز 18 جون 2021 کو سینڑل آرگنائزر مطلوب زیدی نے ذمہ داران و کارکنان کے ہمراہ ایک نشست میں کیا جس میں تین روزہ کنوینشن کے شیڈول اور اس کے مقاصد پر تفصیلی گفتگو کی اور اس کنوینشن کے توسط سے دنیا کو“ الطاف حُسین کی تحریر تقریر و تصویر پر عائد غیر آئینی پابندی،ایم کیو ایم کی سیاسی سرگرمیوں پر عائد غیر قانونی اور غیر اعلانیہ پابندیوں،مہاجروں پر مسلسل ڈھائے جانے والے ریاستی مظالم و بربریت اورسندھ کے وسائل پر پنجابی فوجی کے قبضے سیآگاہ کیا گیا جبکہ مہاجروں کا حقِ خود ارادیت کی جانب قدم انتہائی اہم موضوع رہا۔کنوینشن کے دوسرے روز مورخہ 19 جون 2021 ایم کیو ایم امریکہ کی جانب سے واشنگٹن ڈوپنٹ سرکل سے ایک عظیم الشان ریلی نکالی گئی جو طے شدہ راستوں سے ہوتے ہوئے وائٹ ہاؤس کے سامنے اختتام پزیر ہوء۔ شرکاء نے ایم کیو ایم کے پرچم، الطاف حسین کی تصاویر اور کراچی میں برسوں سے جاری مہاجر نسل کُشی، مہاجروں کی املاک کو غیر قانونی مسمار کرنا، بانی و قائدِ تحریک الطاف حُسین کی آواز پر غیر آئینی بندش، سندھ کے وسائل پر فوجی قبضہ، سندھ کی آزادی، سندھ کو چائینیز کالونی بنانا وغیرہ کے بینرز اُٹھائے ہوئے تھے۔ اس ریلی میں نوجوانوں، بزُرگوں، بچوں، نے بڑی تعداد میں شرکت کی۔ریلی کے اختتام پر تمام شُرکاء وائٹ ہاؤس سے امریکہ کے اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کے سامنے جمع ہوئے جہاں کارکُنان و عوام نے پاکستانی فوجی اسٹیملشنٹ کی مہاجر دُشمنی، سندھ بھر میں جاری مذہبی انتہا پسندی اور طالبانائزیشن، یو-این چارٹر کے زیرِ اہتمام سندھ کی آزادی، اور مہاجر نسل کُشی کے حوالے سے فلک شگاف نعرے بھی لگائے اور آخر میں سینڑل آرگنائزر مطلوب زیدی کی سربراہی میں ایک وفد نے اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کو یاداشت بھی پیش کی۔دوسرے روز شام ہی میں کارکُنان کے درمیان گھنٹوں پر مُحیط ایک بیٹھک کااہتمام کیا گیا جس میں بانی و قائد الطاف حُسین کے بیانات، حالیہ ٹوئیٹس و تقاریروں کے روشنی میں فکری ذہنی نشو و نما کیلیے علمی مباحثہ ہوا اور مُتفقہ طور پر آئندہ کا لائحہ عمل بھی ترتیب دیا گیا جس میں سندھ کے حقوق بشمول مکمل آزادی، مہاجر نسل کُشی کے حوالے سے جناب الطاف حُسین بھاء کی جدوجہد کو عالمی سظح پر مزید اُجاگر کرنے کیلئے باقاعدہ ایک مہم کا آغاز کیا جائے گا جس میں عالمی سربراہان و اداروں کو خطوطارسال کرنا، مظاہروں کا انعقاد،ملاقاتوں کے ذریعہ امریکی سینڑز، اراکین کانگریس، انسانی حقوق کی تنظیموں، اقوامِ متحدہ و دیگر اداروں کو بھی آگاہ کیا جائے گا۔تیسرے اور آخری روز مورخہ 20 جون 2021 سالانہ کنوینشن کا مرکزی عوامی اجتماع منعقد ہوا جس کی نظامت سینڑل آرگنائزنگ کمیٹی کے مرکن محفوظ حیدری نے کی جبکہ ڈیٹرائٹ چیپٹر کے سینئر کارکن توقیر بھاء نے تلاوت قرآن پاک سے تقریب کا آغاز کیا۔ تقریب میں نوجوانوں کی جانب سے نیہا یوسُف، عشرہ عبادت،سینڑل آرگنائزنگ کمیٹی کے اراکین شکیل مہاجر، ریحان عبادت، جوائنٹ سینٹرل آرگنائزرز سید عاطف شمیم اور یوسف سعیدو سینڑل آرگنائزر مطلوب زیدی نے شُرکا سے خطاب کیا۔کنوینشن کے پروگرام کے مہمانِ خصوصی اور ہمارے ہر دل عزیز بانی و قائد الطاف حُسین نے بذریعہ ویڈیو لنک و سوشل میڈیا پلیٹ فارم کے زریعہ شُرکا سے خطاب کیا۔ کنوینشن میں موجود شُرکا نے فلک شگاف نعروں سے اپنے محبوب قائد کا استقبال کیا اور انتہاء نظم و ضبط کے ساتھ مُکمل خطاب سُنا۔ دریں اثناء ایم کیو ایم امریکہ کی جانب سے“ فادر ڈے”کے موقع پر انتہائی خوبصورت تہنیتی کارڈ بھی پیش کیا گیا۔اس اجلاس میں واشنگٹن ڈی سی کے مقامی میڈیا و اخبارات کے نمائندگان بھی موجود تھے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here