امریکا میں سیاہ فام شہری کی ہلاکت پر مزید 2 پولیس اہلکاروں کے خلاف مقدمات درج

0
62
WASHINGTON, DC - MAY 24: Rep. Keith Ellison (D-MN) holds a news conference about what he calls 'the rhetorice attacking Muslims and the Islamophobia' in the 2016 presidential election at the National Press Club May 24, 2016 in Washington, DC. Highlighting remarks by Republican presidential candidate Donald Trump, Ellison and fellow Muslim Rep. Andre Carson (D-IN) said the issue of Islamophobia is not isolated to just one candidate or one election. (Photo by Chip Somodevilla/Getty Images)

واشنگٹن: امریکا میں سیاہ فام شہری جارج فلائیڈ کی ہلاکت پر مزید 2 پولیس اہلکاروں کیخلاف مقدمات درج کرلیے گئے۔

امریکا میں سیاہ فام شہری کی ہلاکت پر مزید تین پولیس اہلکاروں کے خلاف مقدمات درج کرلیے گئے ہیں، جو اس وقت اپنے ساتھی پولیس اہلکار کو جارج کی گردن پر گھٹنا رکھتے ہوئے محض دیکھتے رہے جب کہ گھٹنا رکھنے والے پولیس اہلکار کے خلاف مقدمہ میں مزید سنگین نوعیت کے الزامات کی دفعات بھی شامل کرلی گئی ہیں۔ ریاست مینی سوٹا کے اٹارنی جنرل کا کہنا ہے مزید شواہد کا تقاضا ہے کہ سیکنڈ ڈگری مرڈر چارجز لگائے جائیں۔دوسری جانب امریکا میں سیاہ فام شہری جارج فلائیڈ کی پولیس حراست میں ہلاکت کے خلاف مظاہروں کا سلسلہ تھم نہ سکا، پرُ تشدد مظاہروں اور ہنگاموں کے باعث 20 ریاستوں میں ہزاروں نیشنل گارڈز آفیسرز تعینات ہیں۔سابق امریکی صدر باراک اوباما نے احتجاجی ریلی سے آن لائن خطاب کیا اور کہا کہ یہ وقت سیاسی ایکشن لینے اور پولیس اصلاحات کرنے کا ہے تاکہ امریکی عوام ایک بار پھر ایک ہوسکیں۔ادھر امریکی وزیر دفاع اپنے ہی صدر کے خلاف بول پڑے، مارک اسیپر نے کہا ہے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے فوج کی ضرورت نہیں تھی۔ سابق وزیر دفاع جیمز میٹس نے صدر ٹرمپ کے اقدامات کو نازی جرمنوں کے اقدامات سے ملاتے ہوئے کہا کہ صدر ٹرمپ امریکی عوام کو تقسیم کر رہے ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here