ووٹ کے حق پر ڈاکہ نہیں ڈالنے دینگے”پاکستان  اوورسیز  فورم


اوورسیز کُش  پالیسی نا منظور
 موجودہ حکومت اوورسیز پاکستانیوں کیخلاف دشمن پسند پالیسیوں پر عمل پیرا ہے‘عمران خان حکومت نے اوورسیز پاکستانیوں کو ووٹنگ کا جوحق دیایہ اسے رول بیک کرنا چا رہے ہیں 
 دنیا بھر میں بسنے والے پاکستانی 31بلین ڈالرز کی خطیر رقم حکومت پاکستان کو زرمبادلہ کے طور پر بھیجتے ہیں‘ یہ رقم پاکستان کے بجٹ کا 60فیصد حصہ ہے‘انہیں گمراہ کہنا ظلم عظیم ہے
اوورسیز پاکستانی اپنا 90لاکھ ووٹ بالواسطہ استعمال کرنے کیلئے تیار ہیں‘ بیلٹ بائی میل‘آن لائن یا سفارت خانے کے ذریعے اوورسیزپاکستانیوں کا ووٹ استعمال کیا جاسکتا ہے
آج اوورسیز پاکستانی حکومت پاکستان کو متنبہ کرتے ہیں‘ عمران خان دور میں کی گئی قانون سازی کو ہاتھ نہ لگایا جائے‘ اگر اس قانون سازی کو ختم کیا گیا تو دمادم مست قلندر ہو گا
اوورسیز پاکستانیوں کوووٹ کے حق سے کوئی نہیں روک سکتا‘اگراس حق پر ڈاکہ ڈالا تو مشرقی وسطی ممالک سمیت امریکہ ویورپ کے پاکستانی موجودہ حکومت کا ناطقہ بند کردیں گے
 موجودہ حکومت اوورسیز پاکستانیوں سے خائف دکھائی دیتی ہے‘اوورسیز فورم کے روح رواں شاہد رضا رانجھا‘دیوان غلام مصطفی‘ملک عباس‘افتخار تارڑ‘میاں شعیب ودیگر کی پریس کانفرنس
بروکلین‘ نیویارک (منظور حسین سے):____ پاکستان اوورسیز فورم کے روح رواں ممتاز پاکستانی امریکن شاہد رضا رانجھا نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت اوورسیز پاکستانیوں کے خلاف دشمن پسند پالیسیوں پر عمل پیرا ہے- عمران خان کی حکومت نے اوورسیز پاکستانیوں کو ووٹنگ کا جوحق دیایہ اسے رول بیک کرنا چا رہے ہیں جبکہ موجودہ سیٹ اپ میں شریک چند لیڈرز نے اوورسیز پاکستانیوں کیلئے نازیبا زبان کا استعمال بھی کیا ہے جو قابل مذمت ہے- وہ گزشتہ روز اپنے ساتھیوں نائب چیئرمین پاکستان اوورسیز فورم دیوان غلام مصطفی‘ سینئر ممبران ملک عباس‘ افتخار تارڑ‘ میاں شعیب اور دیگرساتھیوں جن میں اوورسیز پاکستانیوں کی مختلف طبقہ زندگی سے تعلق رکھنے والی شخصیات شامل تھیں کے ساتھ ایک بڑی پریس کانفرنس کررہے تھے-شاہد رضا رانجھا کا کہنا تھاکہ دنیا بھر میں بسنے والے پاکستانی پاکستان کی محبت میں 31بلین ڈالرز کی خطیر رقم حکومت پاکستان کو زرمبادلہ کے طور پر بھیجتے ہیں انہیں گمراہ کہنا ظلم عظیم ہے-ان کاکہنا تھا کہ یہ رقم پاکستان کے بجٹ کا 60فیصد حصہ ہے اور آج اگر حکومت وقت پاکستانیوں کی اس محنت کو تسلیم نہیں کرتی تو یہ بات قابل مذمت ہے-شاہد رضارانجھانے حکومت وقت کو خبردار کرتے ہوئے کہا کہ اگر اوورسیز پاکستانیوں کے ووٹ کے حق پر ڈاکہ ڈالا گیا تو دنیا بھر میں مظاہرے کئے جائیں گے اور اسلام آباد میں دھرنا دیا جائے گا-ان کا کہنا تھا کہ پاکستان اوورسیز فورم کے جنرل سیکرٹری خرم شہزاد رانجھا نے اس سنگین مسئلے پر وزیراعظم‘ وزیر قانون اور چیف الیکشن کمشنر کو خطوط بھی ارسال کئے ہیں اور ان سے مطالبہ کیا ہے کہ اوورسیز کیلئے ووٹ ڈالنے کے قانون پر جو قانون سازی ہو چکی ہے اس پر عملدرآمد کیا جائے -شاہد رضا رانجھا کا کہناہے کہ موجودہ حکومت ملکی معیشت‘ملک میں بگڑتے سیاسی حالات کو چھوڑ کر اوورسیز کے ووٹ کے حق کے خلاف کیوں متحد ہو چکے ہیں -ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کی ایک جماعت کی جانب سے اوورسیز پاکستانیوں کو مخصوص نشستوں پر تعینات کرنے کی پرزور مخالفت کرتے ہیں اوورسیز پاکستانی اپنے ووٹ کے حق سے پیچھے نہیں ہٹیں گے- ان کا کہنا تھا کہ اوورسیز پاکستانی اپنے حلقوں میں ووٹ ڈالنا چاہتے ہیں اوورسیز پاکستانیوں کا ووٹ پاکستان کے انتخابات میں فیصلہ کن کردار اداکرے گا-ان کاکہنا تھا کہ ہمارے منتخب اور انتخابات میں کھڑے ہونے والے نمائندوں کو اوورسیز کے ووٹ کے علاوہ ہمارے مسائل کا مکمل ادراک ہونا چاہئے-شاہد رضا رانجھا کا کہناتھا کہ اوورسیز ووٹ ملک کی بھلائی کیلئے استعمال ہو گا اس ووٹ کو نہ خریدا جا سکتا ہے نہ ہی سیاسی مقاصد کیلئے استعمال کیا جاسکے گا-اوورسیز پاکستانی اپنا 90لاکھ ووٹ بالواسطہ استعمال کرنے کیلئے تیار ہیں اس کیلئے طریقہ کار وضع کیا جانا چاہئے جس کیلئے بیلٹ بائی میل‘آن لائن یا سفارت خانے کے ذریعے اوورسیزپاکستانیوں کا ووٹ استعمال کیا جاسکتا ہے-ان کاکہناتھا کہ وہ سیکرٹری الیکشن کمیشن سے مل چکے ہیں جنہوں نے ہمیں 90دن کے اندر اس اہم قانون کے رائج کرنے کیلئے وعدہ کیا تھا-شاہد رضا رانجھا کا کہنا تھا کہ موجودہ حکومت کو اوورسیز پاکستانیوں کیلئے اچھے اقدامات کرنے چاہئیں تاکہ اوورسیز پاکستانیوں کے دلوں میں ان کی جگہ بنے -اوورسیز کش پالیسیوں سے دیار غیر میں بسنے والے پاکستانی ملک وملت سے کٹ جائیں گے -ہم خودار لوگ ہیں ہمیں پاکستان سے محبت اور وفاداری مقصود ہے-اوورسیز پاکستانی پاکستان کی بہتری کیلئے جدوجہد کررہے ہیں تاکہ پاکستان بھی دنیا کے دیگر جدید ممالک کی طرح ترقی کی منازل طے کرے لہذا آج اوورسیز پاکستانی حکومت پاکستان کو متنبہ کرتے ہیں کہ اس قانون سازی کو ہاتھ نہ لگایا جائے- اگر اس قانون سازی کو ختم کیا گیا تو دمادم مست قلندر ہو گا-ان کا کہنا تھا کہ پاکستان اوورسیز فورم کی شاخیں دنیاکے45ممالک میں موجود ہیں -اوورسیز پاکستانیوں کے ووٹ کا حق صلب کیا گیا تو50لاکھ کے قریب پاکستانی اپنی ٹکٹس خرید کر پاکستان جا کر موجودہ حکومت کے خلاف ووٹ کا حق استعمال کریں گے-پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے پاکستان اوورسیز فورم کے وائس چیئرمین دیوان غلام مصطفی کا کہنا تھا کہ پاکستان اوورسیز فورم کی ووٹنگ رائٹس کے مطالبے میں کسی قسم کی لچک نہیں -سابق حکومت نے اوورسیز پاکستانیوں کو ووٹ کا جو حق دیا ہے اس میں کمی بیشی برداشت نہیں کی جائے گی اور نہ ہی ترمیم-دیوان غلام مصطفی کا کہناتھا کہ موجودہ حکومت کی جانب سے مخصوص نشستوں کا  اعلان ایک بندربانٹ ہے جہاں اتحادی جماعتوں میں اپنے من پسند افراد میں ایک ایک نشست تقسیم کر دی جائے گی- انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت اور اداروں کو وہ بتانا چاہتے ہیں کہ ملک کے دو دیوالیے ہو سکتے ہیں اس میں ایک اخلاقی دیوالیہ اور دوسرا معاشی دیوالیہ-پاکستان آج معاشی بحران کا شکار ہے حکومت کو چاہئے کہ اوورسیز پاکستانیوں کو ساتھ لیکر چلا جائے ہم آپ کے معاشی مسائل حل کرنا جانتے ہیں -دیوان مصطفی کا کہناتھا کہ اوورسیز پاکستانیوں کے پاس وہ وسائل موجود ہیں کہ وہ پاکستان کی معیشت کو سہارا دے سکیں -ان کا کہنا تھا کہ عمران خان نے اوورسیز پاکستانیوں کو ان کے ووٹ کے حق کیلئے قانون بنایا جس کے نتیجے میں صرف پچھلے سال اوورسیز پاکستانیوں نے پاکستان میں 31بلین ڈالرکا زرمبادلہ بھیجا جو ایک تاریخ ہے- دیوان مصطفی کا کہنا تھا کہ اوورسیز پاکستانی اپنا وطن صرف اس لیے چھوڑ کر آئے تاکہ وہ اپنے ملک وملت کی مالی مدد کر کے اپنے ملک کو ترقی کے راستے پر ڈالنا چاہتے ہیں انہیں گمراہ کہنے والے خود گمراہ ہیں -ہم پاکستان کو ترقی پذیر نہیں ترقی یافتہ دیکھنا چاہتے ہیں -ان کاکہنا تھا کہ جتنے اوورسیز پاکستانی اپنے ملک سے مخلص ہیں شاہد وہاں پر بسنے والے پاکستانی اتنے مخلص نہ ہوں -پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ملک عباس کا کہنا تھا کہ اوورسیز پاکستانی پاکستانی معیشت کیلئے اہم اکائی ہیں ملک عباس کا کہنا تھا کہ 80فیصد اوورسیز پاکستانی پاکستان میں جا کر سرمایہ کاری کرتے ہیں اگر ہمارے حق پر ڈاکہ ڈالا گیا تو پوری دنیا میں منظم طریقے سے تحریک چلائی جائے گی- آج تک اوورسیز پاکستانی اپنے حق کیلئے نہیں اٹھے مگر آج ہمیں احساس ہو چکا ہے کہ پاکستان کی حکومتوں نے کس حد تک ہمارے حق کو صلب کرنے اور پاکستان کو مس یوز کیا ہے- ملک عباس کا کہنا تھا  کہ ملک میں کرپشن اور نامساعد حالات کی وجہ سے اوورسیز پاکستانی پہلے ہی ملک میں سرمایہ کاری کرنے سے کترا رہے ہیں -اخلاقی سطح پر پاکستان کا دیوالیہ نکال دیا گیا ہے ہم پاکستان میں بڑی اور مضبوط سرمایہ کاری کرنا چاہتے تھے مگر موجودہ حکومت کے اقدامات اس کی راہ میں رکاوٹ ہیں -پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے پھالیہ سے ایڈووکیٹ افتخار تارڑ نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ آئین اوورسیز پاکستانیوں کوووٹ کا حق دیتا ہے اس حق سے کوئی ہمیں نہیں روک سکتا- موجودہ حکومت ہمارا حق کسی طور پر نہیں چھین سکتی- انکا کہناتھا کہ اصلاحات سے حکومت کی بدنیتی واضح ہے-افتخار تارڑ کاکہنا تھا کہ اوورسیز کے ووٹ پر ڈاکہ ڈالا تو مشرقی وسطی ممالک سمیت امریکہ ویورپ کے پاکستانی موجودہ حکومت کا ناطقہ بند کردیں گے-انکا کہنا تھا کہ سپریم کورٹ کو موجودہ حکومت کے خلاف سوموٹو ایکشن لینا ہو گا- پریس کانفرنس سے پاکستان اوورسیز فورم ٹرائی اسٹیٹ کے صدر شعیب اعوان کاکہنا تھا کہ موجودہ حکومت اوورسیز پاکستانیوں سے خائف دکھائی دیتی ہے- یہ حکومت 3ارب ڈالر کی خاطر آئی ایم ایف کے سامنے لیٹ جاتی ہے اور ملکی عزت کو داؤ پر لگادیتے ہیں مگر ان بے وقوفوں کو سمجھ نہیں آتی کہ اوورسیز پاکستانی ہر سال انہیں 31بلین ڈالر زکی خطیر رقم بھیج رہے ہیں -پریس کانفرنس سے پاکستان اوورسیز فورم کے انفارمیشن سیکرٹری ہارون ظفر رانجھا ودیگر نے بھی اپنے خیالات کا اظہار کیا-

Leave a Reply

Your email address will not be published.